منگل, دسمبر 11, 2012

" زندگی کا سارا کھیل جذب ہونے میں ہے"

 پانی جب زمین میں جذب ہو جاتا ہے تو اس کی زرخیزی کا باعث بنتا ہے،رُک جائے کھڑا رہے تو بیماریاں پھیلاتا ہے۔۔۔بہتا جائے تو راستے میں آنے والی ہرشے کوسیراب کرتا جاتا ہے یہاں تک کہ اپنی ذات کی نفی کرکےسمندرمیں گُم ہوجاتا ہے۔ لیکن! پانی کا ایک مخصوص راستہ،ایک گُزرگاہ ہونا ضروری ہے۔اپنی حدوں سے تجاوزکرے تو تباہی وبربادی کے سوا کچھ حاصل نہیں ہوتا۔یوں نہ صرف اپنی شفافیت کو مسخ کرتا ہے بلکہ دوسروں کے سرسے چھت اور پاؤں سے زمین بھی چھین لیتا ہے۔اسی طرح انسان ساری زندگی کتابیں پڑھتا رہے،امتحان دیتا رہے بڑی سےبڑی ڈگری حاصل کر لے،نت نئی ایجادات کرے، دُنیا کے اعلیٰ سے اعلیٰ ایوارڈ بھی اُسے مل جائیں لیکن جب تک وہ اس علم کو اپنی ذات پر اپلائی نہیں کرے گا۔۔۔اس علم کے پس منظر پرغور نہیں کرے گا۔۔۔اپنی ذات میں اس کے بل بوتے پرتبدیلی نہیں لائے گا یہ علم ایک بھاری بوجھ کے سوا اسے کوئی فائدہ نہیں دے سکے گا۔

2 تبصرے:

  1. بہت خوب! ما شااللہ آپ قدرت سے بہت کچھ سیکھتی ہیں۔ اسی لئے مجھے آپ کی تحآریر اچھی لگتی ہیں۔

    جواب دیںحذف کریں

"ہم سے پہلے"

۔"ہم سے پہلے"۔۔۔کالم جاویدچودھری۔۔۔جمعرات‬‮ 72 جولائی‬‮  بھارت کے کسی صحافی نے اٹل بہاری واجپائی سے جنرل پرویز مشرف کے بارے میں ...