منگل, فروری 19, 2013

"خاموشی"

خاموشی
لفظ کی صورت 
کاغذ پر اترتی ہے
خاموشی 
گیت کی صورت
لبوں پر مچلتی ہے
خاموشی
سانس کی مانند
روح میں اترتی ہے
خاموشی دل میں رہتی ہے
خاموشی درد میں بہتی ہے

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

"یہ جنگل ہمیشہ اداس رہے گا"

یہ جنگل ہمیشہ اداس رہے گا- جاوید چوہدری ۔23 جنوری 2018 میری منو بھائی کے ساتھ پہلی ملاقات 1996ء میں ہوئی‘ میں نے تازہ تازہ کالم لکھنا ...