بدھ, مئی 29, 2013

"کتاب لڑکی "

زندگی کی تلاش کتابوں تک لائی تو پانے والے سب رشتے اور ملنے والے سب تعلق کتابوں میں ڈھل گئے۔ وہ ہر چہرے کو کتاب جان کر پڑھتی، سرورق اُسے تحریر پڑھنے پر اُکساتا۔ رنگا رنگ کتابوں کی دُنیا میں وہ اپنا آپ بھول گئی - کتابوں سے کیا دوستی ہوئی کہ وہ خود ایک کتاب بن گئی ۔اپنا آپ کتابوں کے بیچ رکھ کر کسی قدر شناس کی منتظر رہتی جو اُسے پڑھے،جانے۔ کتابوں کا سحر اُس کے اندر یوں اُترا کہ وہ دیکھنے والوں کے لیے ایک دیدہ زیب کتاب بن گئی جس کا دلکش سرورق اور ریشمی صفحے نظروں کو مبہوت کر دیتے اور نفس ِمضمون پر توجہ نہ رہتی ۔ وہ اپنے آپ سے لڑتی ۔اپنا وجود ہی اُس کی راہ کی رُکاوٹ بن گیا-کتاب پڑھنے سے زیادہ ساتھ رکھنے کی طلب اُسے کبھی تسکین تو دیتی لیکن ایک شدید نارسائی کا کرب بھی سر اُبھارتا وہ اپنی خوشبو بانٹنا چاہتی تھی اپنا وجود نہیں کہ یہ وجود اُس کا اپنا تھا ہی نہیں-وہ تو زندگی کی لائبریری میں رکھی ایک کتاب تھی جو اُس کی پہنچ میں تو ہوتی ہے جو اُسے پیار سے چھو جائے مگر ہمیشہ کے لیے کسی کی نہیں ہو سکتی ۔ وہ گروی شدہ کتاب تھی اُس کے اندر کوئی چیخ چیخ کر کہتا تھا سنو! میں نے اپنے لفظ سر ِبازار رکھے ہیں اپنی ذات نہیں لیکن دُنیا کی اس منڈی میں جسموں کا بیوپار ہوتا تھا یہاں احساس کا کوئی مول نہ تھا ۔ یہاں صرف رنگ برنگ پیرہن بکتے تھے آنچل کی قیمت کوئی نہیں لگاتا تھا۔

1 تبصرہ:

"ہم سے پہلے"

۔"ہم سے پہلے"۔۔۔کالم جاویدچودھری۔۔۔جمعرات‬‮ 72 جولائی‬‮  بھارت کے کسی صحافی نے اٹل بہاری واجپائی سے جنرل پرویز مشرف کے بارے میں ...