اتوار, دسمبر 09, 2012

" قرض "

"آئی ایم ایف" ہم اور
قرض لینا اور قرض ادا کرنا
 صرف معاشیات کا مسئلہ نہیں
 یہ ہماری سرشت ہے
 محبتیں ہمیں 
قرض کی صورت ملتی ہیں
 لوٹانا ہمارا فرض  ٹھہرا
 یہ ہزاروں سال پرانا دستور ہے
 جنس کے بدلے جنس
 کبھی ایسا بھی ہوتا ہے
 کہ ابھی ادا بھی نہیں کیا ہوتا 
 کہ اور مل جاتا ہے
 بن مانگے بن چاہے
 (یہ جھوٹ ہےکہ چاہ کبھی ختم نہیں ہوتی)
 ادائیگی صرف ایک قسط میں ہے
 کہ تپتے آسمان تلے برگد بن جاؤ
 کاش یہ کڑی شرط نہ ہوتی
 کچھ دیر تو سستانے دو
                " ابھی لمبا سفر ہے"

19 دسمبر , 2003

1 تبصرہ:

"بچپن سےپچپن تک"

"بچپن سے پچپن تک" پچیس جنوری ۔۔۔1967۔ پچیس جنوری۔۔۔2022۔ "جانا توبس یہ جانا کہ کچھ نہیں جانا" بچپن اور پچپن کے بیچ لفظی...