جمعہ, جون 14, 2013

" حمید کاشمیری " ایک تاثر

 "حمید کاشمیری "
 ایک انسان دوست منفرد  لکھاری
ڈرامہ نگار،ناول نگار اور کالم نگار
مُختصر تعارف
تاریخ ِپیدائش :یکم جون ۔۔۔۔۔۔1930
جائے پیدائش ۔۔۔۔۔۔ بانسرہ گلی تحصیل مری ۔۔۔ پاکستان
تاریخ ِوفات : 6 جولائی ۔۔۔۔2003
 جائے مدفن ۔۔قبرستان میوہ شاہ کراچی
  زندگی میں انسان احساسات کے مختلف مراحل طے کرتا ہے۔ دیکھنا ،سمجھنا ،محسوس کرنا پھرجذب کرنا اور آخری مرحلہ اُس کا اظہار بھی ہے۔ یہ وہ صلاحیت ہے جو ہرانسان کو ودیعت کی گئی ہے اب یہ پہچان کا کھیل ہے کہ کوئی اُس کو اپنی زندگی میں کس طرح شامل کرے۔
حمید کاشمیری کا نام ذہن کے اُفق پر اُس وقت اُبھرا جب میں دیکھنے اور جذب کرنے کے مرحلے میں تھی اور اس شخصیت کی گہرائی اور سوچ سے ناواقف تھی ۔ زندگی کے مختلف چہروں کی نمائندگی کرتے اُن کے ڈراموں کے رنگ برنگ کردار اپنی طرف متوجہ کرتے۔ پل بھر کو گرفت میں لیتے پھر کہیں اور کوئی خوشبو مجھے اپنی جانب لے جاتی۔ یہ رنگوں اور خوشبوؤں کی دنیا تھی اور میں تتلی کی طرح بےقرار روح ۔ رفتہ رفتہ اِس لکھاری کا نام میرے احساس میں اپنی جگہ بناتا چلا گیا ۔جب شوخ  رنگوں سے پرے زندگی کے کڑوے کسیلے پھیکے رنگ بھی دیکھنے کو ملے تو اُن کی تحاریر پرنظر تھم سی گئی ۔عورت کہانی کو اُن کے ڈراموں کی شکل میں مجسم دیکھا تو یہ حساس لکھاری بہت اپنا اپنا سا لگا۔
وہ مشفق باپ جو بیٹیوں سے محبت بھی کرتا تھا اور اُن کے دکھ اسے  بےچین بھی رکھتے۔ وہ محبت کے ہاتھوں مجبور اُن کے پاؤں کے چھالوں کا مرہم بننا چاہتا۔اُس کے بس میں ہوتا تو راستے کے سارے کانٹے پلکوں سے چُن لیتا لیکن اُس کےہاتھ میں قلم تھا۔اُس نے قلم کو اپنی طاقت بنا کر معاشرے میں عورتوں کے ساتھ روا جانے والی ناانصافیوں اور ظلم کے خلاف آواز بلند کی لیکن اس انداز میں کہ شفقت ِپدری بھی ماند نہ پڑتی اور محبت کی خوشبو پتھر دلوں کو ایک لحظہ سوچنے پر اُکساتی۔وہ لکھتا رہا۔۔۔وہ بھول گیا کہ وہ ایک مرد ہے آزاد ،خود مختار ،طاقت ور جو چاہے کرے۔اُسے یاد رہا توبس یہ کہ وہ ایک باپ ہے جس کا دھیما لہجہ ہی بیٹیوں کےکامیاب مستقبل کا ضامن ہوتا ہے۔حسن ِاتفاق کہ اُس عظیم لکھاری کی بیٹی میری دوست بن گئی۔16 جنوری2002کی ایک شام  پہلی اور آخری بار جناب"حمید کاشمیری"کو قریب سے دیکھا اور سنا۔اُن لمحوں کی یادگارمیری ڈائری میں جگمگاتے اُن کے ہاتھ سے لکھے یہ لفظ میرا اثاثہ ہیں۔۔۔
۔"خدا آپ کو زندگی کے ہر امتحان میں کامیاب وکامران کرے ہمیشہ عزت کے ساتھ زندہ رہیں"۔
 یہ لفظ اُن کی شخصیت کی عملی تفسیر بھی تھے کہ عزت ہر شے کی مقدم ہے۔ زندگی کے رنگوں کو اجاگر کرنے میں شاید اُن کا اتنا ہی حصہ تھا کہ ایک سال بعد جولائی 2003 کو وہ اس جہان ِفانی سے کوچ کر گئے۔ لیکن اپنے رنگ تحاریر کی صورت اور اپنی خوشبو اپنی بیٹوں میں چھوڑ گئے۔وہ محبت جو اُن کے لفظوں میں جھلکتی تھی اب اُس کا عکس اُن کی بیٹی کی آنکھوں میں ملنے لگااور بیٹی  صدقۂ جاریہ کی مثال بن گئی۔لفظ سے محبت جو اُس کے خون میں تھی اب  یہ کشش اُسے قرآن کے قریب لے آئی۔اُس نے قرآن پڑھنا،سمجھنا اور لکھنا شروع کر دیا۔۔وہ اٹک اٹک کر پڑھتی، سمجھ کر دُہراتی اور کاغذ قلم تھام کر مشکل سے لکھتی۔ یہ بہت کٹھن اور لمبا سفر تھا۔وہ سر جھکائے دھیمی رفتار سے اپنی راہ چلتی رہی یہاں تک کہ 2013 آن پہنچا اور یکم جون 2013 کو شاید ہی کسی بیٹی نے اپنے لکھاری باپ کو اس کے جنم دن پر اتنا انمول تحفہ دیا ہو گا کہ اُس نے ساڑھے چھ سال کی مدت میں پورا قرآن پاک ترجمہ تفسیر کےساتھ باقاعدہ طور پرمکمل پڑھا اور اب 7جولائی 2013 کو اس لکھاری کی دسویں برسی پر صدقۂ جاریہ کا یہ بےمثال تحفہ یقیناً حیات ِابدی میں اُن کے لیے خاص ہو گا۔انشاءاللہ
کل رات  جناب حمید کاشمیری سے ایک بار پھر ملاقات کا موقع ملا۔ لیکن اس بار وہ خود نہیں تھے اُن کی خوشبو تھی ۔۔۔اُن کے رنگ تھے۔۔۔اُن کی زندگی کا سرمایہ تھا جو میری نظروں کے سامنے تھا۔ جناب کی اہلیہ،تین بیٹیاں،ایک بیٹا اوراُس کی شریک ِحیات سے ملاقات ہوئی ۔عقل نے ایک بار پھر دل کی گواہی کا ساتھ دیا وہ واقعی لکھاری باعمل تھا۔جو آہنگ،دھیما پن، اورمحبت کی نرمی اُن کے لہجے اُن کے لفظ میں تھی وہ اُن کے جگرگوشوں میں بھی درجہ بدرجہ دیکھنے کو ملی ۔اپنائیت اور گرم جوشی کا احساس میرا اپنی سوچ پر یقین مستحکم کر گیا کہ لفظ کو زوال نہیں اگر سچا ہے دل سے نکلا ہے تو اُس کی عظمت چہرے کی سرخی بن کر خون میں شامل ہو جاتی ہے اوراُس کی چمک  دیکھنے والی نگاہوں کو خیرہ کرتی ہے۔
آج 15 جون 20013 کو اُن کے اُسی نواسے کی زندگی کا اہم ترین دن ہے جب وہ ایک نئے سفر کا آغاز کر رہا ہے۔وہ نواسا جس کی محبت اُنہیں کشاں کشاں شہر ِکراچی سے ان سردیوں کی شاموں میں لے آئی تھی۔اور میری یاد کے آرکائیو میں آتش دان کے قریب اُن کا سراپا ہمیشہ کے لیے ٹھہر گیا۔
اللہ پاک سے دل کی گہرائیوں سے دعا گو ہوں کہ
 اُن کے گھرانے پر ہمیشہ چاہتوں اور برکتوں کی پھوار رم جھم کی صورت برستی رہے اور صحت سلامتی والی زندگی کے ہمراہ بچوں کی خوشیوں کا چراغاں اس گھر پر یوں ہی جاری وساری رہے۔ زندگی کا یہ نیا سفر اجسمانی اور ذہنی سکون کی نوید لیے رواں دواں رہے۔
نم آنکھوں کا یہ احساس  بھی میرے ہمراہ ہے کہ وہ باپ جس کی خوشبو نے مجھے یہ لفظ لکھنے پر مجبور کیا اگر وہ یہاں ہوتے تو نہ جانے اپنی محبتوں کو کس انداز سے سپرد ِقلم کرتے۔
  کیسے اپنے لفظوں کی مالا پرو کر اپنی لخت ِجگر کے ٹکڑے کا سہرا لکھتے۔ اُسے اپنی کن دعاؤں اورچاہتوں سے نوازتے۔ جانے کیسے خواب بسے تھے اُن کی آنکھوں میں اپنے پیاروں کے لیے۔اب ان خوابوں کی تعبیر کے موقع پر خوشی کے آنسو  جُدائی کے دُکھ پر حاوی ہو گئے ہیں شاید یہی اُن کی آخری خواہش بھی تھی کہ اُن کا باغ سدا  خوشیوں سے مہکتا رہے۔
 اللہ پاک جناب حمید کاشمیری کے درجات بلند کرے اور اُن کے اہل ِخانہ کواپنے گھروں میں شاد وآباد رکھے۔
  آمین یا رب العالمین
! آخری بات
علم کتاب میں نہیں زندگی میں ہے جو علم کتاب میں قید ہو وہ بُک شیلف کی زینت تو بن سکتا ہے لیکن دل کی الماری کے کواڑ تک بھی نہیں پہنچ پاتا۔



1 تبصرہ:

  1. اللہ مرحوم کو جنت الفردوس میں اعلی مقام سے نوازے۔ تعارف کرانے کا شکریہ۔ اور آپ کا جذبہ بھی ان کے لئے لفظوں میں جھلک رہا۔

    جواب دیںحذف کریں

"دلیل" اور"کارواں بنتا گیا"

تئیس جون 2017 بمطابق   ستائیس رمضان المبارک1438 ھ کو دلیل ویب سائیٹ کے قیام کو ایک برس مکمل ہوا۔ اس ایک   برس کے دوران "دلیل ویب س...