منگل, نومبر 14, 2017

"لفظ سے لباس تک"

لفظ روح کا لباس ہیں اورلباس انسان کے جسم کی تفسیر۔ لیکن یہ بھی سچ ہے کہ انسان کی اصلیت لباس میں نہیں جسم میں پنہاں ہے۔اورروح کی گہرائی لفظ سے نہیں عمل سے ماپی جاتی ہے۔
بیش قیمت زرق برق لباس وقتی طور دیکھنے والے کو مرعوب کر سکتا ہے۔۔۔نگاہوں کو خیرہ کر سکتا ہے۔۔۔ پرجسم کا راز جسم کو جاننے سے ہی کُھلتا ہے۔ اس کے لیے اپنے جسم کے اسرار ورموزسے آگاہی پہلی شرط ہے۔
اسی طرح الفاظ میں گھن گرج ہو یا بہتے چشموں کی سی نغمگی ۔۔۔ اگر اُن کی روح تک رسائی نہ ہو وہ محض کچھ پل کو متاثر کرتے ہیں۔ لمحاتی طور پر قدم ضرور روک لیتے ہیں۔ لیکن ہمیشہ کے لیے اپنا اسیر نہیں بنا پاتے۔
لباس ہو یا لفظ موسم اور وقت کے تابع ہوتا ہے اور ببانگ دہل اس کا اظہار کرتا ہے۔ لباس سے موسم کی شدت کا اندازہ ہوتا ہے تو لفظ سے روح کی کیفیت کا راز کھلتا ہے۔
لباس کی شکنیں رات کی کروٹوں کی غمازی کرتی ہیں تو بےداغ ،بے شکن لباس روزِروشن کی طرح اندر کی کہانی سناتا ہے۔ ذات کے بھید کھولتا ہے۔ 
لفظ انسان کے کردار کی منظر کشی کرتے ہیں۔ سفاک،برہنہ لفظ جگر چھلنی کردیتے ہیں تو کہیں اصل شخصیت کو تہہ درتہہ چھپائے یہ تازہ قلعی شدہ دکھتے ہیں۔ آنچ کی ہلکی سی تپش پا کرجن کی اصلیت جلد ہی سامنے آ جاتی ہے۔ 
!حرفِ آخر
لفظ کی تابندگی خیال کی سچائی کا پتہ دیتی ہے۔بےشک حرف اہم ہیں پریہ ہماری شناخت ہرگز نہیں کہ شناخت صرف عمل سے ہےجو ہر کامیابی یا ناکامی کا فیصلہ کرتا ہے۔جس قول میں عمل کی روح نہ ہو وہ اپنی موجودگی کا بھرپور احساس تو رکھتا ہے لیکن نظروں کو سالہا سال طواف پر مجبور نہیں کر سکتا۔اقوال کیسے ہی کیوں نہ ہوں عمل کی بنیاد ضرور ہوتے ہیں، جو کہنے کی جرات نہیں رکھتا وہ عمل کی کشتی کا ناخدا بھی نہیں ہوا کرتا۔ایسے لوگ بس سب تقدیر کا لکھا کہہ کر جان چھڑا جاتے ہیں۔اس کے باوجود انسان کا کہا گیا حرف آخر نہیں اور وہ خسارے کا سوداگر بھی ہے۔

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

"کہانی ایک رات کی"

انسان کی زندگی کہانی رات اور دن کی آنکھ مچولی کے مابین بھاگتےگزرتی ہے۔دن کے کھاتے میں گر ہار جیت کے برابر   امکانات  ہوتے ہیں تو رات نام...