منگل, اگست 13, 2013

"بتی"

کتنے کچے رشتے ہیں
بتی کے نہ جلنے سے 
بدگمانی کی فصل 
یوں کاشت ہوتی ہے
جیسے رات کی بارش کے بعد
سڑک کنارے
  کھمبیاں اُگ آئیں
 جابجا بے فیض بے موسم 
لیکن اپنا اختیار کب ہوتا ہے 
بے موسم کی بارش پر
 خواہشوں کی یورش پر 
کتنے کچے رشتے ہیں
 پھر بھی  
سچےلگتے ہیں 
 اپنے اپنے لگتے ہیں  
رات کی بارش تن پہ جب برستی ہے
 ہم فصلیں کاشت کرتے ہیں 
اور 
زندگی عذاب کرتے ہیں

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

" ووٹ کس کو دیں "

پانچ سال ایک شاندارجمہوریت کے مزے لُوٹنے کے بعد بالاآخر وہ دن آ ہی گیا جب ہمارے سر پر سہرا سجنے والا ہے وہ کمی کمین جونام نہاد جمہوریت ک...