جمعرات, جون 13, 2013

" اشعار کے آئینے "

نہیں مصروف میں اتنا کہ گھر کا راستہ بھولوں
کوئی جب منتظر نہ ہو تو گھر اچھے نہیں لگتے
۔۔۔۔۔۔
محبتیں خیال کرتی ہیں
چاہتیں سوال کرتی ہیں
 رقابتیں خمار کرتی ہیں 
عداوتیں بےحال کرتی ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محبتیں اداس کرتی ہیں 
خوشبوئیں تلاش کرتی ہیں
 رتجگوں کا عذاب ایسا ہے
 چاہتیں پیاس کرتی ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پتھروں سے جی کیوں لگاتے ہو
 آئینۂ دل اپنے لیے بچا کر رکھو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 وہ میرے ہاتھوں کی لکیروں میں تو ہے
 اپنے مقدرکی لکیروں میں کہاں سے ڈھونڈوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوست دُکھ نہیں دیتے رشتے اُداس رکھتے ہیں
 دوست آنکھ کا آنسو دل میں اُتار لیتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دل سی چیز کے گاہک نہ بنو
 اپنا دل بھی سرِبازارلا کر رکھو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جس کے نام سے تم منسوب ہوئے
 اُس ان جان نے ہمیں بہار کر لیا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تِرا وجود خزاں میں کھلتے گلاب جیسا ہے 
تِرا فہم تِرا ادراک سچے خواب جیسا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 بھولنا چاہو بھی تو نہ بھولو گے 
یہ قرینے باتوں کے یہ نگینے لفظوں کے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قیامت آ بھی جائے تو
 پر تم سے کم نہ ہو گی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہی بہت ہے کہ اِک پھول کھل گیا
 بارش برس گئی اورموسم نکھر گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چاندنی رات کی تنہائی 
کیا کچھ نہ ہم سے کہہ پائی
 وہ جو لفظ تھے بکھرے بکھرے 
آج بھی تازہ ہے جن کی پہنائی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 در نہ ہو تو دستک نہیں ہوتی
 بےنوا کوئی صدا کب تک نہیں ہوتی 
۔۔۔۔۔۔۔۔
زندگی جا رہی ہے
 روشنی آرہی ہے
 تازگی بڑھ رہی ہے
 روح گنگنا رہی ہے 
   لیکن زندگی جا رہی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ جو آئینے کا نکھار ہے
یہ سب تری تو بہار ہے
 نظر اُٹھا کر ذرا دیکھ تو
  ہر طرف خمارِیار ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
"ماضی حال "
کھونے سے کل بھی ڈر لگتا تھا
بچھڑنے سے آج بھی ڈر لگتا ہے
گرنے سے کل بھی ڈر لگتا تھا
ٹوٹنے سے آج بھی ڈر لگتا ہے 
اندر کا بچہ کبھی بڑا نہیں ہوتا
 سر اُٹھانے سے سایہ جدا نہیں ہوتا

۔۔۔۔۔
 الٰہی یہ پل میں کیا ماجرا ہو گیا
 مرے قد سے بڑا مرا آئینہ ہو گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔
 دریا مل بھی جائیں پر کنارے نہیں ملتے
مقدر کا کیا دُکھ جب ستارے  نہیں ملتے
۔۔۔۔۔۔
چاہو تو رستہ مل ہی جاتا ہے
میں بے سمت جنگل تو نہیں
۔۔۔۔
دکھ آنسو بھی تو نہیں 
جو  آنکھ  میں چمکیں
اور روح میں جذب ہو جائیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تبسم چہرے سے عیاں ہے
تھکن آنکھوں میں نیہاں ہے
سفر دستورِزمانہ ٹھہرا ورنہ
مقدر لکیروں میں پنہاں ہے
۔۔۔۔۔
"ملن کے لمس کی خُوشبُو "
ہاتھوں سے سرکتا ہوا خواب
پلکوں میں لوٹ آیا پھر 
خزآں میں کِھلتا ہوا پھول
صبح ِ بہار کی نوید لے کر
شامِ زندگی میں سمٹ آیا پھر

۔۔۔۔۔
جو ٹھہرا تو آنکھ کے نقش میں سمٹا ہوا تھا
جو بکھرا تو بینائی میں سمویا ہی نہ جاؤں 
(مئی20۔۔۔2016)


1 تبصرہ:

گوگل اورگاڈ - مجیب الحق حقی

گوگل اورگاڈ - مجیب الحق حقی بشکریہ۔۔دلیل ویب سائیٹ۔۔اشاعت۔۔11نومبر 2017۔ خدا کی قدرت اتنی ہمہ گیر کس طرح کی ہوسکتی ہے کہ کائنات کے ہر ...