صفحہِ اول

جمعرات, دسمبر 20, 2012

" در در بھٹکتی رہتی ہوں "

   زندگی کی تلخیوں سے بوند بوند رستی رہتی ہوں
   میں ہر آن اپنے آپ  سے ہی لڑتی رہتی ہوں
 اپنے  پاؤں پر خود  کُلہاڑی مار کر 
 گھسٹنے کا تماشہ دیکھتی رہتی ہوں 
جو خواب  پہنے  تھے موسموں 
اب تلک ایک ہی سپنا بنتی رہتی ہوں
محبتوں  کے ہزار روپ   پا  کر بھی
اس نگاہ ِ محبت کو ترستی رہتی ہوں
 اپنی آنکھ میں جلتی سلائی پھیر کر
اب   نادیدہ  کرب   سہتی   رہتی ہوں
 اس کو ملنا ہے نہ مل سکے گی کبھی 
 جس کے لیے در در بھٹکتی رہتی ہوں












2 تبصرے :

  1. زیست کی تلخی سے میں رستی رہتی ہوں
    ہر لمحہ مین خود سے لڑتی رہتی ہوں

    اپنے پاؤں پہ خود کلہاڑی مار کے میں
    جلتی ریت پہ تنہا چلتی رہتی ہوں

    خواب کبھی پہنے تھے رنگیں موسم کے
    اب تک ایک ہی سپنا بنتی رہتی ہوں

    روپ ہزاروں چاہت کے پا کر بھی میں
    ایک نظر کی چاہ میں گھلتی رہتی ہوں

    اپنی آنکھ مین گرم سلائی پھیری تھی
    اب نادیدہ کرب میں سہتی رہتی ہوں

    اس نے کبھی نہیں ملنا مجھ کو لیکن
    اس کے لئے در در میں بھٹکتی رہتی ہوں
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    آپ کی شاعری پر میں نے بلا اجازت طبع آزمائی کر دی ۔۔ امید ہے برا نہین لگا ہو گا ۔۔۔۔ :) :)

    جواب دیںحذف کریں
  2. Buahtttttttttttttt Khubsurattttttttttttttttttttttttttt ....:) Loved it

    جواب دیںحذف کریں