اتوار, اکتوبر 28, 2012

" وہ قرار میں بھی بے قرار رکھتی ہے "

                                  " وہ قرار میں بھی بےقرار رکھتی ہے "

                                جواب میں بھی سوال کرتی ہے

                                اقرار میں بھی انکار کرتی  ہے

                                     چُھو کر بھی پاک کرتی ہے

                                     پِلا  کر بھی تِشنہ رکھتی ہے

                       آسودگی  میں ناآسودہ  کرتی ہے

                      راس ہو کر بےمول جو مہکتی ہے

                                  بُلا کر وہ خود بھٹک جاتی ہے

                                   بِٹھا کر وہ  دُور ہٹ  جاتی ہے

                       جو حجاب میں بھی بے حجاب لگتی ہے

                       جو کتاب میں بھی کوئی سراب لگتی ہے

                            آؤ اُس کو چُھو کر پھر امر ہو جائیں

                                         جو ہم کو دُور رکھتی ہے 

                                        جو ہم کو پاس رکھتی ہے

                                                یکم اکتوبر  ،2012




1 تبصرہ:

گوگل اورگاڈ - مجیب الحق حقی

گوگل اورگاڈ - مجیب الحق حقی بشکریہ۔۔دلیل ویب سائیٹ۔۔اشاعت۔۔11نومبر 2017۔ خدا کی قدرت اتنی ہمہ گیر کس طرح کی ہوسکتی ہے کہ کائنات کے ہر ...