صفحہِ اول

بدھ, اکتوبر 31, 2012

" تنہائی لکھـ رہی ہوں اور ہجر پڑھ رہی ہوں "

      تنہائی لکھ رہی ہوں  ہجر پڑھ رہی ہوں  

                میں  تو آج کل  یہی کُچھ کر رہی ہوں 

                             وہ مُجھ سےگُریزاں ہے ساحل کی مانند

                             اور میں  لہر کی صورت  بڑھ  رہی ہوں

 مِرے  جنم دن  پر  یاد  نہ  کیا اُس نے

 اِس  بےاعتنائی  پر بُہت کُڑھ رہی ہوں

اُس بےوفا  کی  جفا پر اعتبار نہیں آتا

 اور  ابھی  تو اُس کو سمجھ رہی ہوں

  ابھی ایک اور تاریخِ انتظار باقی ہے

 ابھی کُچھ اور سپنے بُن  رہی ہوں

 وہ اپنی ذات میں قائم تنہا ایک شخص 

میں لمحہ لمحہ ریزہ ریزہ بکھر رہی ہوں

  

کوئی تبصرے نہیں :

ایک تبصرہ شائع کریں