صفحہِ اول

منگل, اکتوبر 30, 2012

" آج پھر کوچۂ جاناں کو جسارت کی ہے "

                               آج پھر کُوچۂ جاناں کو جسارت کی ہے
                               کہ  اب  بات  کُچھ کُچھ عبادت کی ہے
                                  میں  نے  کُچھ نہیں  مانگا  اُس سے 
                                  بس    اِک    تمناء رفاقت   کی   ہے
                                  ہم  ترستے ہی رہے اُس نگاہ کوسدا
                                   سُنا ہے کہ  وہ  نظر قیامت  کی ہے
                                  جانے کونسا رنگِ محبت دیکھا ہے
                                  کوئی با ت نہ اُس کی لگاوٹ کی ہے
                                کج ادائی،بےوفائی،جُدائی اورتنہائی
                                    جانےکس کس چیزپہ قناعت کی ہے 
                                    نہ جیت کی تمنّا اور نہ ہار کا خوف
                                   ہم  نے تو ایسی اِک  تجارت کی ہے
                                   ٹوٹ  کے  برسا  اور پھر تھم  گیا  
                                  ابَر نے آج اُس کی شرارت کی ہے
                          خواہشوں کی بارش میں دل یوں سُلگ اُٹھا
                          میں نےشِدّت ِگریہ سےبھی وحشت کی ہے
                               لوگ  کہتے ہیں ٹوٹ کر بکھر جاؤ گی 
                               کیا میں نے کوئی ایسی حماقت کی ہے 
                                    فیصلہ ہے کہ اُسے بھول جاؤں گی
                                  یہ میں نے اپنے سے بغاوت کی ہے

                                                  

کوئی تبصرے نہیں :

ایک تبصرہ شائع کریں